54

جنگیں ریاستیں بناتی ہیں یا توڑتی ہیں

جنگیں ریاستیں بناتی ہیں یا توڑتی ہیں، اور قوموں کی تقدیر ہمیشہ کے لیے بدل سکتی ہیں۔ اس طرح، وہ انسانیت کے کچھ اہم ترین واقعات کی نمائندگی کرتے ہیں۔

اگرچہ گزشتہ پانچ ہزار سالوں میں ریکارڈ شدہ جنگ کے دوران درجنوں اہم، دلچسپ لڑائیاں ہوئیں، یہاں 5 جنگیں ایسی بیان کی گئی ہیں جنہوں نے تاریخ کو ہمیشہ کے لیے بدل دیا۔

𝐌𝐢𝐥𝐯𝐢𝐚𝐧 𝐁𝐫𝐢𝐝𝐠𝐞 (𝟑𝟏𝟑):
یہ جنگ 313 عیسوی میں رومن خانہ جنگی کے دوران لڑی جانے والی اہم ترین اور بڑی لڑایوں میں سے ایک ہے۔

اس جنگ نے نہ صرف یورپ میں رومن سلطنت کے مستقبل میں دوررس اثرات مرتب کیے بلکہ یوری عوام کا مذہب بھی آج تک کے لیے بدل دیا۔

قسطنطین اعظم جو شہنشاہ بننے کے لیے لڑ رہا تھا، روم شہر کے قریب اپنے سے دوگنی فوج سے لڑنے کے لیے پہنچا۔

جنگ سے ایک رات پہلے، اس نے مبینہ طور پر آسمان پر ایک کراس یا چی-رو کا نشان دیکھا جس میں یہ الفاظ تھے کہ "اس نشانی سے، تم فتح کر لو گے۔

اس نے اپنے سپاہیوں کو حکم دیا کہ وہ اپنی ڈھالوں پر صلیب پینٹ کریں اور اس کے بعد اس نے جنگ شروع کرنے کےلیے حملہ کا حکم دیا۔ قسطنطین اعظم جنگ جیتنے کے بعد رومی شہنشاہ بن گے۔شہنشاہ بننے کے بعد اس نے کے بعد اس عیسائیت کی سرپرستی کرنا شروع کی، جس کے نتیجے میں مسیح مذہب پورے یورپ میں پھیل گیا۔اور یہ ایک چھوٹے سےمصیبت میں گھرے ہوئے فرقے سے سلطنت کا سرکاری مذہب بن گیا۔ ایک ایسے سلطنت جو پورے یورپ میں پھیلی ہوئی تھی۔

𝐌𝐚𝐧𝐳𝐢𝐤𝐞𝐫𝐭 (𝟏𝟎𝟕𝟏):
اگرچہ 1453 میں فتح قسطنطنیہ رومن سلطنت کے خاتمے کیلیے زیادہ مشہور ہے۔ لیکن منزیکرت کی جنگ بازنطینی سلطنت کے لیے ایک ناگزیر حادثے کے طور پر ہمیشہ یاد رکھی جائے گی۔

اس جنگ نے اناطولیہ(موجودہ ترکی) مین ترک قوم کی جڑیں ایسی مضبوط کی جو آج تک قائم ہیں۔اور اسے یورپ اور روسی طاقتیں مل کر بھی کبھی بھی ختم نہیں کر سکیں۔

دسویں صدی عیسوی میں بازنطینی طاقت کا مرکز یونان کے بجائے اناطولیہ تھا۔ اناطولیہ بلقان اور اٹلی اور مشرق وسطیٰ کے کچھ حصوں پر تسلط جمانے کے لیے بازنطینی طاقت کا مرکز تھا۔

بغداد کے خلفاء کی 900 عیسوی تک اقتدار پر موثر گرفت ختم ہو گئی تھی۔ اور بازنطینی سرحد پر متعدد آزاد اسلامی ریاستیں وجود میں آئیں، جب کہ خلفاء خود علاقائی حکمرانوں کی کٹھ پتلی بن گئے۔

علاقائی حکمرانوں کے اثر کو توڈنے کےلیے خلفاء نے ترک جنگجوؤں کو اپنے اقتدار کی بحالی کے لیے مدعو کیا۔

لیکن یہ فارمولہ کام نہیں کرسکا اور یہ فارمولہ ایک نئی طاقت، عظیم سلجوق ترک سلطنت، جو وسطی ایشیا سے ترکی تک پھیلی ہوئی تھی، کی تشکیل کا باعث بنی۔

سلطان الپ ارسلان کے ماتحت سلجوقیوں نے بازنطینی علاقے میں داخل ہونا شروع کر دیا، جس کی وجہ سے شہنشاہ رومانوس چہارم کی طرف سے جنگ منزیکرت کی صورت میں ردعمل سامنے آیا۔

دونوں فوجیں 1071 میں مشرقی اناطولیہ میں آمنے سامنے ہوئیں۔ بازنطینی فوج کی آدھی فوج نے جنگ بھی نہیں کی کیونکہ اندرونی بازنطینی سیاست کی وجہ سے غداری ہو گئی۔ بازنطینی شہنشاہ کو گرفتار کر لیا گیا، اورشہنشاہ کے رہا ہونے کے باوجود رومن سلطنت خانہ جنگی میں پڑ گئی۔

جس کی وجہ سے ایک دہائی کے اندر، سلطنت نے اپنا بیشتر حصہ کھو دیا اور اسے پوپ کو مدد کے لیے پکارنا پڑا، جو ارتھوڈوکس چرچ اور رومن سلطنت کیلیے مزید تباہ کن ثابت ہوا۔

اس جنگ کے بعد رومن سلطنت بارہا کوششوں کے باوجود سنبھل نہ سکی۔

اس دوران، سلجوقیوں نے 1073 میں شیعہ فاطمی مصری خاندان سے یروشلم بھی چھین لیا، اس طرھ ترکوں کی طاقت مذید بڑھ گئی۔جو بلاخر 1453 عیسوی میں رومی سلطنت کے خاتمے کا باعث بنی۔

𝐒𝐞𝐜𝐨𝐧𝐝 𝐁𝐚𝐭𝐭𝐥𝐞 𝐨𝐟 𝐓𝐚𝐫𝐚𝐢𝐧 (𝟏𝟏𝟗𝟐):
ترائین کی دوسری جنگ برصغیر پاک و ہند کی تاریخ کی سب سے اہم جنگ ثابت ہوئی۔ اس جنگ نے برصغیر پاک و ہند کی موجادہ صورتحال پیدا کرنے میں اہم کردار ادا کیا

جغرافیائی سیاسی لحاظ سے، اس جنگ کے نتیجے میں جنوبی ایشیا سیاسی طور پر عظیم اسلامی دنیا کا حصہ بن گیا،اور اسلامی حکومت اس جنگ کے بعد چھ سو سال تک پورے برصغیر پر قایم رہی۔ اور اس نے جنوبی ایشیا پر ہر لحاظ سے انتہائی دوررس اثرات مرطب کیے۔

12ویں صدی تک، زیادہ تر ہندوستان، جو دنیا کے امیر ترین خطوں میں سے ایک ہے، پر مقامی ہندو اور بدھ ریاستوں کی حکومت تھی، حالانکہ اسلامی ریاستوں نے شمال مغربی ہندوستان (آج کے پاکستان کے کچھ حصے) پر قدم جمائے تھے۔

تاہم، 12ویں صدی کے آخر میں، غور کے محمد شہاب الدین غوری، آج کے افغانستان کے حکمران برصغیر میں ایک مستقل اسلامی سلطنت قائم کرنا چاہتا تھا۔

آج جو پاکستان ہے اس کا بیشتر حصہ فتح کرنے کے بعد، وہ 1191 میں ترائین (قریب دہلی) میں ہندو مہاراجہ پرتھویراج چوہان کی قیادت میں ایک بڑے راجپوت (ایک ہندو جنگجو ذات) لشکر کے ساتھ جنگ لڑئی، جہاں اسے شکست ہوئی۔

اگلے سال، وہ راجپوتوں کے 300,000 لشکر کے مقابلے میں صرف 120,000 کےلشکر کے ساتھ دوبارہ میدان جنگ میں مقابلے کیلیےاسی ترائین کے میدان میں آیا۔

ترائین کی دوسری جنگ میں، اس نے اپنی تیز گھڑسوار فوج کو ہندو افواج کا نطم و ضبط توڑنے کے لیے ان کے مرکز پر حملہ کرنے کا حکم دیا۔ اور اس فوج کو إختلف طریقوں سے ہاتھیوں کو خوفزدہ کرنے کے لیے استعمال کیا۔

شہابالدین غوری نےترائین کی دوسری جنگ میں فیصلہ کن فتح حاصل کی اور ہندو راجہ پرتھوی راج چوہان کو مار ڈالا۔

شمالی ہندوستان کے قلب میں اپنی حکمرانی کے خلاف مرکزی ہندو اتحاد کو ہٹانے کے بعد، غور کی فوجوں کے سپہ سالار محمد شہاب الدین غوری نے پورے شمالی ہندوستان پر قبضہ کر لیا، 1200 تک بنگال تک کا علاقہ اپنے قبضے میں لے لیا۔

دہلی سلطنت (1206) اور مغل سلطنت (1526) کے قیام کے ساتھ بالآخر ہندوستان کا بیشتر حصہ اسلامی حکومت کے کنٹرول میں آیا۔

اس جنگ نے پاکستان جیسی مستقبل کی ریاستوں اور مغلوں جیسی مضبوط سلطنتوں کی بنیاد رکھی جو جنوبی ایشیا کے بیشتر حصوں کو متحد کرنے میں کامیاب رہی۔

آج دنیا میں مسلمانوں کی سب سے زیادہ تعداد جنوبی ایشیا میں ہے۔

𝐁𝐚𝐭𝐭𝐥𝐞 𝐨𝐟 𝐀𝐢𝐧 𝐉𝐚𝐥𝐮𝐭 (𝟏𝟐𝟔𝟎):
یہ وہ جنگ تھی جس نے سب سے پہلے نہ رکنے والے منگول لشکر کو روکا اور انہیں مشرق وسطیٰ، افریقہ اور یورپ میں مزید آگے بڑھنے سے نہ دیا۔

منگول فوجیں 1258 میں بغداد کو تباہ کرنے کے بعد 1260 میں جدید دور کے اسرائیل میں مملوک فورس کے خلاف جنگ لڑنے کی تیاری کر رہی تھی۔

مملوک سلطنت ان دنوں مصر و شام کے علاقوں میں قائم تھی۔منگولوں کی قیادت ایک ثانوی کمانڈر کر رہے تھے کیونکہ ان کے رہنما ہلاگو خان، چنگیز خان کا پوتا، جانشینی کے تنازعہ کی وجہ سے منگولیا واپس چلا گیا تھا۔ اس کا مقصد شام اور مصر بھی کو فتح کرنا تھا۔

دونوں افواج میں 20,000 سے زیادہ جوان تھے۔ تاہم، مملوکوں نے منگولوں کو ایک پرانے منگول حربے کا استعمال کرتے ہوئے شکست دی۔

مملوک لیڈر قتوز، جسے دراصل منگولوں نے پکڑ لیا تھا اور غلام کے طور پر بیچ دیا گیا تھا، اس نے اپنے گھڑسوار دستوں کا بیشتر حصہ میدان کے آس پاس کی پہاڑیوں میں چھپا رکھا تھا۔

اور منگول حملے کا سامنا کرنے کے لیے ایک چھوٹی فوج کو آگے بڑھنے کا حکم دیا تھا۔ تھوڈی دیر جنگ لڑنے کے بعد مملوک فوج اہستہ اہستہ پیچھے ہٹنے لگی۔جیسے ہی منگول فوج ایک ایسے میدان میں پہنچ گئی جہاں وہ چاروں طرف سے مملوکوں کے گھیرے میں آچکے تھے۔مملوک فوج کے چھپے ہوئے دستوں نے چاروں طرف سے منگول فوج پر حملہ کر دیا۔

اور منگولوں کو فاش سکست کا سامنا کرنا پڑا۔

اس جنگ میں پہلی بار منگولوں کو کھلی جنگ میں شکست ہوئی تھی۔

جنگ عین جالوت کی اہمیت یہ ہے کہ اس نے عالم اسلام اور یورپ کو مزید منگول حملوں سے محفوظ رکھا اور انہیں مزید مغرب کی طرف بڑھنے سے روک کر ثابت کیا کہ منگولوں کو شکست دی جا سکتی ہے۔

تھوڑی عرصے بعد، پوری دنیا کو فتح کرنے کے لیے متحدہ منگول محاذ ٹوٹ گیا اور منگولوں نے ایک دوسرے سے لڑنا شروع کر دیا۔

منگول سلطنت انتشار کا شکار ہو گئی۔مصر اور شام اور یورپ ہمیشہ ہمیشہ کے لیے منگولوں سے محفوظ ہو گے۔

𝐁𝐚𝐭𝐭𝐥𝐞 𝐨𝐟 𝐂𝐚𝐣𝐚𝐦𝐚𝐫𝐜𝐚 (𝟏𝟓𝟑𝟐):
کجامارکا کی جنگ جدید دور کے شمالی پیرو کے اینڈیس پہاڑوں میں فرانسسکو پیزارو کے ماتحت ہسپانوی اور شہنشاہ اتاہولپا کی قیادت میں انکا کے درمیان لڑی گئی۔ یہ تاریخ کی سب سے عجیب لڑائیوں میں سے ایک تھی کیونکہ دونوں فریقوں کی غیر متناسب تعداد تھی۔

پیزارو نے 1532 میں صرف 168 آدمیوں کے ساتھ انکا سلطنت میں قدم رکھا، یہ تعداد اتنی چھوٹی تھی کہ کوئی شخص اتنے لوگوں ک ساتھ جنگ کا تصور بھی نھیں کرسکتا، ایسا لگتا ہے کہ پیزارو کا منصوبہ شروع سے ہی انکا سلطنت پر قبضے کا تھا۔

پیزارو نے میکسیکو میں ہرنان کورٹس کی پچھلی فتوحات کا مطالعہ کیا تھا، جہاں اس ہسپانوی فاتح نے صرف ایک ہزار آدمیوں کے ساتھ ایزٹیک سلطنت کو شکست دی تھی۔

Incas کو شکست دینے کے لیے، اس نے دھوکہ دہی کا سہارا لیا۔ سومی ارادوں کو ظاہر کرتے ہوئے، اس نے اتاہولپا سے ملاقات کا اہتمام کیا، جو 80,000 جنگجوؤں کو کجامارکا کے قصبے کے چوک میں میٹنگ کے لیے لائے تھے (زیادہ تر شہر کے باہر ڈیرے ڈالے ہوئے تھے)۔

پیزارو نے جرات کا مظاہرہ کرتے ہوئے صرف 168 کے ساتھ اتاہولپا پر قبضہ کر لیا اور اپنے گھوڑوں، بندوقوں کا استعمال کرتے ہوئے انکاوں کے زیادہ تر بڑے کمانڈروں کو بغیر کسی حزیمت کے مار ڈالا، جو جنگ کی توقع نہیں کر رہے تھے۔اہم انکا فوج کو شکست و ریخت کا سامنا کرنا پڑا۔اور وہ بری طرح بکھرگئی۔اور انکا کے شہنشاہ کو قید کر لیا گیا۔

انکا شہنشاہ پر پیزارو کا کنٹرول اس کی سلطنت کے کنٹرول کا باعث بنا، پہلے کٹھ پتلیوں کے ذریعے اور بعد میں براہ راست۔

اس جنگ کے بعد ایک براعظم کے بیشتر حصے کی تقدیر اگلے تین سو سالوں کے لیے ہسپانوی کالونی کے طور پر تبدیل کر دی گئی تھی۔

پیرو میں چاندی کی کان کنی سے عالمی منڈی میں سیلاب آ گیا اور یورپ اور چین جیسے دور دراز مقامات پر عالمی معیشت کی منیٹائزیشن میں اضافہ ہوا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں